Islam

Tafseer Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad

(Last Updated On: January 14, 2019)

Tafseer Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad

Tafsir Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad.

 

What is Para 30?

Para 30 is Last Juzz of Holy Quan. This Para (Juz)Is also titled as  Amma. The 30th juz’ of the Quran includes the last 36 Surahs (chapters).

What is Tafsir?

please write some lines for what is a Tafsir.

About Sheikh Farooq Ahmad.

Please write some about him.

Tafseer Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad

Tafsir Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad

Allah has revealed a system of human testing by establishing a series of life and death.
The test is that human beings can not value their will in comparison to the will of Allaah and the intention.
Nor can the way to walk according to the nature of another person like yourself.

In this test, Allah has made a difference between right and wrong in the knowledge of man.
And the ability to distinguish in the good news.

The reward of adopting good and right and the bad deeds of evil and evil are also attributed to Allaah by daylight in front of man through his prophets and apostles.

Fortunately, this series of guidance started with the initial life and unfortunate is that humans accepted this very little guidance.

And the world’s brightness glimpse,  happiness, happiness, psychiatrists and material things are considered to be the reality.

In addition to this, it is impossible to exist any other life and any other life.

 

The main purpose of the Prophecy of the Prophets was that humans should be reminded of again and again . That is why you will eventually have to give world life a day, so consider this life as a respite and collect maximum for the Hereafter.

Tafsir Para 30 by Sheikh Farooq Ahmad

اللہ تعالٰی نے زندگی اور موت کا سلسلہ قائم کر کے انسان کی آزمائش کا ایک نظام واضع فرمایا.

آزمائش یہ ہے کہ اللہ تعالٰی کی مرضی اور منشاء کے مقابلے میں انسان نہ اپنی مرضی کو اہمیت دے سکتا ہے.

اور نہ ہی اپنے جیسے کسی اور انسان کی منشاء کے مطابق چلنے کی راہ اختیار کر سکتا ہے

اس آزمائش میں بخیروسلامتی سے  گزرنے کے لیے اللہ تعالٰی نے انسان کے شعور میں حق و باطل کا فرق الہام کر دیا ہے

اور خیر وشر میں تمیز کی صلاحیت ودیعت فرما دی ہے

خیر اور حق کو اپنانے کا انعام اور باطل اور شر کو اختیار کرنے کا بد انجام بھی اللہ تعالٰی نے اپنے نبیوں اور رسولوں کے زریعے انسان کے سامنے روز روشن کی طرح واضح کر دیا ہے.

خوشی کی بات یہ ہے کہ ہدایت و رہنمائی کا یہ سلسلہ ابتدائے حیات کے ساتھ ہی شروع ہو گیا اور بدقسمتی کا حال یہ ہے کہ انسانوں نے بہت کم اس ہدایت کو قبول کیا

اور دنیا کی چمک دمک، ریل پیل، خوشی وشَدمانی، نفسیاتی رغبتوں اور مادی چیزوں ہی کو حقیقت سمجھا
ان کے علاوہ کسی اور وجود اور کسی دوسری زندگی کو ناممکن خیال کیا.انبیاء کی بعثت کا اصل مقصد یہی تھا کہ انسانوں کو بارباریہ یاددہانی کرائی جائے. کہ تمہیں بالآخر ایک روز دنیاوی زندگی کاحساب دینا ہو گا، لہٰذا اس زندگی کو مہلت عمل سمجھو اور آخرت کے لئے زیادہ سے زیادہ توشہ جمع کر لو.

Topics